سرورق | ہمارے بارے | سابقہ شمارے | رابطہ
ماہنامہ منہاج القرآن > اکتوبر 2012 ء > الحدیث : حرمت کعبہ اور اس کے آداب


ماہنامہ منہاج القرآن : اکتوبر 2012 ء
> ماہنامہ منہاج القرآن > اکتوبر 2012 ء > الحدیث : حرمت کعبہ اور اس کے آداب

الحدیث : حرمت کعبہ اور اس کے آداب

علامہ محمد معراج الاسلام

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ راوی ہیں کہ حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : اللہ تبارک وتعالیٰ فرماتا ہے۔

ان عبدا اصححت جسمه، واوسعت عليه فی الرزق فی الدنيا فلا يعد الی فی خمسة اعوام أو أربعة اعوام، محروم.

’’جس بندے کو میں نے دنیا میں جسمانی صحت اور رزق کی فراوانی عطا کی، پھر بھی وہ چار یا پانچ سال کے اندر میرے پاس نہ آیا، وہ بڑا ہی محروم ہے‘‘۔

شرح و تفصیل

اس حدیث پاک میں مالی و جسمانی قوت و طاقت رکھنے والے افرادِ امت کو کعبہ کی زیارت کے لئے باقاعدہ آنے اور حج کرنے کا حکم دیا گیا ہے اور نہ آنے والوں کی مذمت کی گئی ہے۔ یہ پر جلال اسلوب و انداز اس بات کا متقاضی ہے کہ پہلے کعبہ شریف کے بارے میں مکمل معلومات حاصل کی جائیں تاکہ اس حکم کی حکمت سمجھ میں آئے اور پھر اس کی روشنی میں علی وجہ البصیرت اس حدیث کو سمجھا جائے۔ اس لئے ہم پہلے کعبہ کا مکمل تعارف پیش کرتے ہیں۔

کعبہ کی پرشکوہ عمارت

کعبہ معظمہ ایک پرشکوہ، بلند و بالا اور فلک بوس چوکور عمارت کا نام ہے جو مکہ مکرمہ میں مسجد حرام کے وسیع و عریض اور خوبصورت شفاف صحن کے وسط میں واقع ہے۔ اس کی جلالتِ شان اور شرف و عظمت کے پیش نظر، اظہارِ محبت و عقیدت کے طور پر ہر سال، اس پر ایک نہایت قیمتی، قالین نما غلاف چڑھایا جاتا ہے، جس پر سونے کے تاروں سے قرآنی آیات کندہ ہوتی ہیں، کالے غلاف میں ملبوس کعبہ معظمہ بڑا پرشکوہ دکھائی دیتا ہے جیسے کوئی بارعب بادشاہ پورے جاہ و جلال کے ساتھ کھڑا ہو، یہ رعب و جلال اس کو سجتا بھی ہے کیونکہ وہ بادشاہ حقیقی کے جاہ وجلال کا مظہر ونمائندہ ہے اور اس لئے بنایا گیا ہے تاکہ بندے وہاں عجز ونیاز کے ساتھ حاضری دیں اور اظہارِ بندگی کریں اور محبوب حقیقی اور خالق ومالک کے لئے دلوں میں جو جذباتِ محبت رکھتے ہیں ان کا کھل کر مظاہرہ کریں اور اس مظاہرہ میں دیوانگی کی حدوں کو چھولیں، دیکھنے والا پہلی ہی نظر میں جان لے کہ یہ سچے عاشق ہیں، جنہوں نے لباسِ جنوں پہنا ہوا ہے اور مجنوں بن کر اپنے محبوب کے گھر کا طواف کر رہے ہیں۔

دولت مندوں پر لازم کیا گیا ہے کہ جب وہ حالات کو سازگار اور راستے کو پرامن پائیں تو اس کا حج کرنے کے لئے آئیں اور اس کی زیارت اور اس کے طواف کا شرف حاصل کریں۔

’’بیت اللہ‘‘ اور ’’پہلا گھر ‘‘

قرآن پاک میں بتایا گیا ہے کہ کعبہ شریف پہلا گھر ہے جو لوگوں کے لئے بنایا گیا ہے، وہ مکہ مکرمہ میں ہے اور بڑی ہی برکت والا ہے، اس کی ایک خوبی یہ بھی ہے کہ وہ تمام عالم کے لئے مرکز رشد وہدایت ہے۔

اِنَّ اَوَّلَ بَيْتٍ وُّضِعَ لِلنَّاسِ لَلَّذِيْ بِبَکَّةً مُّبَارَکًا وَّهُدًی لِّلْعَالَمِيْنَ.

پہلا سوال :

یہ چوتھے پارے کے پہلے رکوع کی پانچویں آیت ہے، اس میں کعبہ شریف کو ’’اَوَّلَ بَيْتٍ‘‘ یعنی پہلا گھر قرار دیا گیا ہے، سوال یہ ہے کہ پہلا گھر ہونے کا مطلب کیا ہے۔

دوسرا سوال :

اسی طرح پہلے پارے کی ایک آیت میں اللہ تعالیٰ نے اسے ’’بَيْتِيْ‘‘ فرمایا ہے یعنی میرا گھر دوسرے لفظوں میں اسے ’’بیت اللہ‘‘ قرار دیا ہے، یعنی ’’اللہ کا گھر‘‘ یہاں دوسرا سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ہر مسجد اور عبادت گاہ ’’بیت اللہ‘‘ ہوتی ہے، پھر کعبہ شریف ہی کو ’’بیت اللہ‘‘ کیوں فرمایا؟

دونوں سوالوں کا جواب :

 ان دونوں سوالوں کا جواب یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کی عبادت کے مختلف انداز ہیں، بندے ذکر و فکر، تسبیح ومناجات، تلاوت ونماز وغیرہ کی صورت میں عبادت کرتے ہیں، یہ عبادات کسی بھی جگہ اور کسی بھی مسجد میں ادا کی جا سکتی ہیں، ان کے لئے کوئی عبادت گاہ یا کوئی مسجد مخصوص نہیں ہے۔ لیکن کعبہ شریف کی انفرادی شان یہ ہے کہ اس میں ہر قسم کی عبادات کے علاوہ ایک ایسی عبادت بھی کی جاتی ہے جو کسی اور عبادت گاہ یا مسجد میں جائز نہیں اور وہ عبادت طواف ہے۔ اس عبادت کے لئے خاص طور پر اس گھر کو سب سے پہلے بنایا گیا ہے اس لئے یہ ’’پہلا گھر‘‘ بھی ہے اور سب سے زیادہ ’’بیت اللہ‘‘ کہلانے کا مستحق بھی، کیونکہ اس میں وہ عبادت کی جاتی ہے جو کسی اور جگہ ممکن ہی نہیں۔

کعبہ کیا ہے؟

کعبہ ایک بلند و بالا، سیاہ غلاف میں ملبوس پرشکوہ چوکور عمارت کا نام ہے، جس کے درو دیوار اور چار کونے ہیں اور وہ حرم شریف کے صحن کے درمیان بنا ہوا ہے، مگر حقیقت یہ ہے کہ اصل کعبہ وہ نہیں ہے جو ظاہر بین آنکھوں کو نظر آتا ہے بلکہ اصل کعبہ وہ ہے جسے اہل حقیقت دیکھتے ہیں۔ اصل کعبہ اس مقام یا جگہ کا نام ہے جہاں یہ کعبہ کھڑا ہے۔ یہ جگہ شروع ہی سے مرکز انوار ہے، اگر یہاں موجودہ عمارت اور اس کے در ودیوار نہ ہوتے تو بھی یہ جگہ کعبہ ہوتی اور لوگوں کو حکم ہوتا کہ وہ اس کا حج کریں۔

یہی وجہ ہے کہ جب طوفان نوح کے بعد یہ جگہ ریت میں دب گئی اور اس جگہ صرف ایک سرخ ٹیلہ رہ گیا تھا اور لوگوں کے لئے جگہ کا تعین مشکل تھا، تو اس وقت بھی یہاں کا حج کرنے کے لئے آتے تھے، انبیاء کرام کو یہ حکم تھا کہ وہ خصوصی طور پر یہاں پہنچیں اور حج کے مناسک ادا کریں۔ مظلوم فریاد لے کر یہاں پہنچتے اور دعا کرتے تو وہ قبول ہوتی تھی۔ خواص کو یہاں کعبہ کی خوشبو آجاتی تھی، اس لئے درودیوار اور عمارت نہ ہونے کے باوجود کعبہ یہاں موجود تھا۔ جو لوگ نور ولایت سے سرفراز ہیں اور عرف عام میں انہیں اولیاء اللہ کہتے ہیں، وہ اصل کعبہ ہی کی زیارت کے لئے آتے ہیں، اگر وہ اسے نہ دیکھ سکیں تو سراپا فریاد بن جاتے ہیں اور دعا کرتے ہیں کہ اس کا دیدار کرایا جائے۔

آدابِ کعبۃ اللہ

کعبۃ اللہ کی شان و شوکت کے چرچے سن کر اور اس کی زیارت کے لئے مقرر کئے گئے زبردست آداب و ضوابط کی تفصیلات پڑھ کر اور اس کے حیرت انگیز فضائل وکمالات سے آگاہ ہو کر، انسان دنگ رہ جاتا ہے۔

حضرت ابو ایوب انصاری رضی اللہ عنہ راوی ہیں :

جناب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا :

اِذَا اَتَيْتُمْ الْغائِطَ فَلاَ تَسْتَقْبِلُوْا الْقِبْلَةَ وَ لاَ تَسْتَدْ بِرُوْهاَ.

’’جب تم پیٹ کا فضلہ پھینکنے کے لئے کہیں جاؤ تو اس حالت میں قبلہ کی طرف نہ منہ کرو، نہ پشت کرو‘‘۔

کعبہ معظمہ، انوار الہٰیہ کے نزول کی مرکزی جگہ ہے اس لئے عالم اسلام کے تمام مسلمانوں کے لئے قابل احترام ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مسلمان خواہ زمین کے کسی بھی خطے سے تعلق رکھتے ہوں، وہ اپنی حیثیت اور سمجھ کے مطابق اس کا ضرور احترام کرتے ہیں، اس کی طرف پاؤں نہیں پھیلاتے، ادھر منہ کر کے نہیں تھوکتے اور پیشاب وغیرہ کرتے وقت اپنا رخ پھیر لیتے ہیں اور اس حالت میں اس کی طرف پشت بھی نہیں کرتے۔ یہ عام مسلمانوں کی حالت ہے لیکن جو اہل نظر ہیں اور کعبہ شریف کے صرف در ودیوار ہی کو نہیں دیکھتے بلکہ اس میں انوار وتجلیات کا مشاہدہ بھی کرتے ہیں، ان کا معاملہ ہی کچھ اور ہے، وہ اس انداز سے احترام کرتے ہیں اور ایسے آداب و ضوابط ملحوظ رکھتے ہیں جو عوام کی سمجھ سے بھی بالا تر ہوتے ہیں اور ان کا ذہن ان آداب کی پابندی کی طرف نہیں جاتا۔

یہی وجہ ہے کہ صحابہ کرام حج کرنے کے بعد، فوراً اپنے شہروں کی طرف واپس چلے جاتے تھے تاکہ کوئی ایسی غلطی سرزد نہ ہو جائے جو حرمتِ کعبہ کے منافی ہو۔

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنھما فرمایا کرتے تھے، مکہ مکرمہ کے علاوہ کسی مقام پر مجھ سے ستر غلطیاں سر زد ہو جائیں میں یہ تو گوارا کر سکتا ہوں، لیکن یہ گوارا نہیں کرتا کہ مکہ مکرمہ میں ایک غلطی بھی سرزد ہو، اسی لئے آپ طائف میں رہتے تھے۔

حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کا سرکاری حکم

جب لوگ حج سے فارغ ہو جاتے تو حضرت عمر فاروق اعظم رضی اللہ عنہ، سرکاری حکم جاری فرما دیتے تھے۔ اے اہل یمن! تم یمن چلے جاؤ، اے اہلِ شام! تم شام چلے جاؤ! اے اہل عراق! تم عراق چلے جاؤ۔ اب مکہ مکرمہ میں زیادہ دیر ٹھہرنے کی کوشش نہ کرو، ایسا نہ ہو کہ زیادہ قیام سے ادب کے تقاضے پورے کرنے میں سستی ہو جائے، اس لئے قیام سے بہتر یہی ہے کہ اپنے وطن کی طرف لوٹ جاؤ تاکہ کعبہ کی حرمت و محبت دلوں میں برقرار رہے۔

اپنے وطن میں رہ کر، جسمانی طور پر کعبہ سے دور ہوتے ہوئے بھی محبت و عقیدت کی بنیاد پر، روحانی طور پر کعبہ سے قریب رہنا، اس قرب سے بہتر ہے جس میں انسان جسمانی طور پر تو کعبہ کے پاس ہو، مگر ذہنی طور پر اس سے دور ہو، اس کیفیت سے کعبہ شریف کی بے حرمتی ہوتی ہے، جس کی وہ بارگاہ خداوندی میں شکایت بھی کرتا ہے اور اہل مشاہدہ وہ شکایت سن بھی لیتے ہیں۔

کعبۃ اللہ کی شکایت

ایک مرتبہ حضرت وھب بن ورد نے سنا، کعبہ کہہ رہا تھا :

اِلَی اللّٰهِ اَشْکُوْ ثُمَّ اِلَيْکَ يَاجِبْرِيْلُ مَااَلْقٰی مِنَ الطَّائِفِيْنَ حَوْلِيْ مِنْ تَفَکُّرِ هِمْ فِی الْحَدِيْثِ وَلَغْوِهِمْ وَلَهْوِهِمْ لئِنْ لَمْ يَنْتَهُوْا عَنْ ذَالِکَ لَاَنْتَفِضَنَّ اِنْتِفَاضَةً يَرْجِعُ کُلُّ حَجَرٍ اِلَی الْجَبَلِ الَّذِيْ قُطِعَ مِنْهُ.

’’اے اللہ! میں تیری بارگاہ میں فریاد کرتا ہوں، اے جبریل! تیرے حضور بھی شکایت کرتا ہوں، یہ طواف کرنے والے مجھ پر ستم ڈھاتے ہیں، طواف کے دوران دلوں میں بے کار اور نامناسب باتیں سوچتے رہتے ہیں، اگر وہ اس حرکت سے باز نہ آئے تو میں اتنی زور سے کانپوں گا کہ ہر پتھر اڑ جائے گا اور اسی پہاڑ پر چلا جائے گا، جہاں سے اسے لیا گیا تھا‘‘۔

(احياء العلوم، : 243)

اولیاء کرام کی دربارِ کعبہ میں حاضری

کعبہ معظمہ، حقیقی حاکم اعلیٰ کا دربار خاص ہے، شاہی دربار میں اس کے ارکان اور اہل دربار کی حاضری لازمی ہوتی ہے، دربارِ مکہ کے خاص درباری اولیاء کرام ہیں، اس لئے اولیاء کرام یہاں ضرور حاضری دیتے ہیں اور طواف و زیارت سے فیض یاب ہوتے ہیں، اس مقصد کے لئے کوئی وقت مقرر نہیں، وہ جب چاہیں روحانی یا جسمانی طور پر یہاں پہنچ جاتے ہیں، مگر اوقات فاضلہ میں یا جمعہ کی رات کو وہ ضرور حاضری دیتے ہیں، کیونکہ ان خصوصی اوقات میں کعبہ شریف کے نوری فیضان میں خاص تموج اور جوش پیدا ہوتا ہے، جس سے وہ اپنے قلب ونظر اور ظاہر وباطن کو منور کرتے ہیں۔ اہل بصیرت فرماتے ہیں۔

وَلاَ شَکَّ فِيْ تَرَدُّدِ الْاَوْلِيَائِ اِلَيْهَا فِی الْاَوْقَاتِ الْفَاضِلَةِ وَيَحْضُرُوْنَ الْجُمُعَةُ وَالْاَوْقَاتِ الشَرِيْفَةَ وَ يَحُجُّوْنَ کُلَّ عَامٍ.

(تاريخ القطبی، 28)

’’اس میں کوئی شک نہیں کہ اولیاء کرام، فضیلت والے خاص اوقات میں اور جمعہ کو کعبہ شریف میں پہنچتے ہیں اور ہر سال حج کرتے ہیں‘‘۔

اولیاء کرام کے ایک عالی پایہ گروہ کو ’’اوتاد‘‘ اور ’’ابدال‘‘ کہتے ہیں، اس عظیم گروہ کا کوئی نہ کوئی فرد، سورج کے طلوع و غروب کے وقت یعنی صبح و شام وہاں ضرور موجود ہوتا ہے، گویا وہ دونوں وقت کی حاضری ضروری سمجھتا ہے۔

يُقَالُ لاَ تَغْرُبُ الشَّمْسُ مِنْ يَوْمٍ اِلاَّ وَيَطُوْفُ بِهٰذَا الْبَيْتِ رَجُلٌ مِنْ الْاَبْدَالِ وَلاَ يَطْلُعُ الْفَجْرُ مِنْ لَيْلَةٍ اِلاَّ طَافَ بِهِ وَاحِدٌ مِنَ الْاَوْتَادِ وَاِذَا انْقَطَعَ ذَالِکَ کَانَ سَبَبُ رَفْعِهِ مِنَ الْاَرْضِ فَيُصْبِحُ النَّاسُ وَقَدْ رُفِعَتِ الْکَعْبَةُ لاَ يَرَی النَّاسُ لَهَا اَثْرًا.

(احياء العلوم، 1 : 242)

‘‘کہا جاتا ہے، جب سورج غروب ہونے لگتا ہے تو ابدال میں سے کوئی نہ کوئی شخص ضرور اس کا طواف کرتا ہے اور جب فجر طلوع ہونے لگتی ہے تو اوتاد میں سے کوئی نہ کوئی ضرور اس کا طواف کرتا ہے، جب یہ سلسلہ منقطع ہو جائے گا، یعنی اولیاء کرام میں سے کوئی اس کا طواف کرنے والا نہیں رہے گا تو یہ کعبہ شریف کے اٹھائے جانے کا سبب بن جائے گا، چنانچہ لوگ صبح کو اٹھیں گے تو کعبہ کا کوئی نشان دکھائی نہیں دے گا، وہ اٹھایا جا چکا ہوگا‘‘۔

حضرت عیاش بن ابی ربیعہ رضی اللہ عنہ راوی ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ۔

لَا تَزَالُ هٰذِهِ الْاُمَّةُ بِخَيْرٍ مَاعَظَّمُوْا هٰذِهِ الْحُرْمَةَ حَقَّ تَعْظِيْمِهَا فَاِذَا ضَيَعُوْا ذَالِکَ هَلَکُوْا.

’’جب تک یہ امت ’’حرم کعبہ‘‘ کی اس طرح تعظیم کرتی رہے گی جیسی تعظیم کرنے کا حق ہے، تو خیر و برکت سے بہرہ ور رہے گی، جب وہ یہ معمول ترک کر دے گی تو تباہ و برباد ہو جائے گی‘‘۔

(ابن ماجة)

قرآن پاک میں ہے۔

وَمَن يُرِدْ فِيهِ بِإِلْحَادٍ بِظُلْمٍ نُذِقْهُ مِنْ عَذَابٍ أَلِيمٍ.

(الْحَجّ ، 22 : 25)

’’اور جو شخص حرم کعبہ میں گناہ کا ارادہ بھی کرے گا تو ہم اسے المناک عذاب چکھائیں گے‘‘۔

اللہ تعالیٰ کے ہاں حرمت کعبہ کو اتنی اہمیت حاصل ہے کہ کعبہ شریف کی طرف جانے والے قربانی کے جانوروں اور حج کے ارادے سے سفر کرنے والے انسانوں کی بے حرمتی سے بھی روکا گیا ہے۔ قرآن پاک میں ہے کہ

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ لاَ تُحِلُّواْ شَعَآئِرَ اللّهِ وَلاَ الشَّهْرَ الْحَرَامَ وَلاَ الْهَدْيَ وَلاَ الْقَلآئِدَ وَلاَ آمِّينَ الْبَيْتَ الْحَرَامَ.

(الْمَآئِدَة ، 5 : 2)

گویا حکم ہے کہ ان کا احترام ملحوظ رکھو اور کوئی ایسی حرکت نہ کرو جو ان کی شان کے منافی ہو اور ان کی موجودہ حیثیت کے لحاظ سے بے ادبی کے زمرے میں آتی ہو کیونکہ وہ اس وقت راہِ کعبہ پر گامزن ہیں اور اس کی زیارت کے لئے جا رہے ہیں۔

کعبہ کی تاریخ پر نظر ڈالنے سے پتہ چلتا ہے، جس دور میں بھی کسی نے اس کی بے حرمتی کا ارادہ کیا اور اس کی عزت و تکریم کو پامال کرنے کے درپے ہوا بلکہ اگر اس کی توہین کی نیت بھی کی، تو وہ اپنے جاہ و جلال سمیت پیوندِ زمین کر دیا گیا، اس کا شاہی دبدبہ، لاؤ لشکر، زر و مال اور جنگی سازو سامان کچھ کام نہ آیا اور اس کا حشر قیامت تک کے لئے عبرت کا نشان بن گیا۔

حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تشریف آوری سے تقریباً ایک ہزار سال پہلے کی بات ہے، سرزمین عرب پر تُبَّع بادشاہ حکمران تھا۔ جس کی حکومت ملک کے طول و عرض میں پھیلی ہوئی تھی اور اس نے بزور شمشیر تمام قبائل کو اپنا مطیع بنایا ہوا تھا۔ اسے فتوحات کا بہت شوق تھا، چونکہ فوجی لحاظ سے طاقتور تھا اس لئے جدھر کا رخ کرتا، فتح و نصرت اور کامیابی اس کے قدم چومتی اور مقامی آبادی اس کے زیر نگین آ جاتی۔

بنو ھذیل ایک جنگ جو قبیلہ تھا، مگر تُبَّع کی فوجی قوت کے سامنے اس کی بھی پیش نہ گئی اور اس نے اطاعت قبول کر لی، بنو ھذیل کی قریش سے لگتی تھی وہ چاہتے تھے کسی طرح قریش کا زور ٹوٹے اور تُبَّع ان پر حملہ کر کے انہیں شکست دیدے، جب انہوں نے تُبَّع کی فوجی طاقت دیکھی تو انہیں امید کی کرن نظر آئی وہ تُبَّع کے پاس آئے اور اسے پٹی پڑھائی کہ یہاں مکہ میں ایک گھر ہے لوگ دور، دور سے اس کی زیارت کے لئے آتے ہیں اگر تم اسے منہدم کر دو اور قریش کو اپنا غلام بنا لو، جو اس گھر کے متولی ہیں تو پورا عرب تمہارا غلام بن جائے گا۔

بنو ھذیل نے چکنی چپڑی باتیں کر کے تُبَّع بادشاہ کو شیشے میں اتار لیا اور بادشاہت اور شان و شوکت کے سبز باغ دکھا کر کعبہ شریف منہدم کرنے پر آمادہ کر لیا۔ جب اس نے یہ خوفناک ارادہ کیا، اسی وقت اس کے سر میں شدید درد شروع ہوگیا، جو دیکھتے ہی دیکھتے ناقابل برداشت ہوگیا۔ ناک، منہ اور جسم کے مختلف حصوں سے سخت بدبودار پانی بہنے لگا، لوگوں کو اس کے قرب سے ابکائیاں آنے لگیں، ہم نشینوں کے لئے اس کے نزدیک بیٹھنا مشکل ہوگیا، وہ ناک پہ کپڑا رکھ کر آنکھیں بند کر کے دور بھاگ گئے۔

وزیر کو بڑی فکر لاحق ہوئی، اس نے حکماء اور اطباء کو بلایا سب نے بادشاہ کی حالت دیکھ کر کہا، یہ کوئی زمینی بیماری نہیں بلکہ امرِ سماوی اور عذاب الہٰی ہے ہم اس کا علاج نہیں کر سکتے۔ اس کے لئے کوئی ایسا شخص تلاش کیا جائے جو صاحب روحانیت اور باطنی امراض و اسرار کا ماہر ہو، وہی اس بیماری کو سمجھ سکتا اور علاج کر سکتا ہے۔ اس کی تہہ تک پہنچنا ہماری سمجھ سے باہر ہے۔ وزیر نے اعلان کرا دیا کہ جو شخص اس عجیب و غریب بیماری کو سمجھنے اور اس کا علاج کرنے کی صلاحیت رکھتا ہو، وہ مہربانی کر کے خود ہی سامنے آ جائے۔

ایک شخص وزیر کے پاس آیا اور کہا وہ بادشاہ کے روگ کا علاج کر سکتا ہے، وزیر اسے بادشاہ کے پاس لے گیا حکیم نے بادشاہ سے پوچھا

اَيُهَا الْمَلِکَ! هَلْ اَنْتَ نَوَيْتَ لِهٰذَا الْبَيْتِ سُوْءًا.

’’اے بادشاہ! کیا تو نے اس بیت اللہ شریف کو کسی قسم کا نقصان پہنچانے کا ارادہ کیا تھا‘‘؟

بادشاہ نے اعتراف کیا : ہاں! میں نے اسے گرانے کا ارادہ کیا تھا۔ حکیم نے کہا :

اَيُهَاالْمَلِکُ! نِيَتُکَ اَحْدَثَتْ لَکَ هٰذَا الدَّاءَ وَرَبُّ هٰذَا الْبَيْتِ عَالِمٌ بِالْاَسْرَارِ، فَبَادِرْ وَارْجِعْ عَمَّا نَوَيْتَ.

’’اے بادشاہ : یہ سب صورت حال اور بیماری، اسی بدنیتی کی پیداوار اور برے ارادے کا نتیجہ ہے، اس گھر کا ایک رب ہے، جو دلوں کے بھید جانتا ہے، اس لئے اگر تو عافیت چاہتا ہے تو فوراً اس ارادے سے باز آ، اور جو بری نیت کی ہے، اس سے توبہ کر اور عقیدت مند بن کر اس گھر کی زیارت کے لئے جا اور اس کا طواف کر، تیرے تمام روگ دور ہو جائیں گے‘‘۔

جونہی بادشاہ نے اپنا پہلا ارادہ بدلا اور کعبہ شریف کی حرمت و تعظیم کا ارادہ کیا اسی وقت اس کے ناک منہ سے پانی بہنا بند ہوگیا اور وہ دیکھتے ہی دیکھتے ٹھیک ہوگیا، جیسے اسے کچھ ہوا ہی نہیں تھا، وہ یہ اعجازی شان اور حیرت انگیز کرامت دیکھ کر دنگ رہ گیا، عملی طور پر جو کچھ بیتا اس نے اس کی آنکھیں کھول دیں، اس کا دل کعبہ شریف کے لئے عقیدت و محبت سے لبریز ہوگیا۔ وہ پہلو میں شوق فراواں لئے بڑی چاہت کے ساتھ کعبہ کے سامنے حاضر ہوا، اسے دیکھ کر سراپا نیاز بن گیا اس کا پورا وجود عقیدت میں ڈھل گیا، کوئی ہوش نہ رہا کہ کہاں ہے، اسی عالم بے خودی میں اس نے بڑے ذوق و شوق کے ساتھ کعبہ معظمہ کا طواف کیا۔ اس کے دل نے چاہا کہ ایسے انداز سے اظہار محبت کرے، جس میں انفرادیت ہو، اظہار عقیدت کا وہ طریقہ کسی نے نہ اپنایا ہو، عشق سچا ہو تو ہر مشکل آسان کر دیتا ہے اور چاہت کے اظہار کے لئے نئی نئی راہیں تلاش کر لیتا ہے۔ تُبَّع کی سچی محبت نے بھی پیار کی ایک راہ تلاش کر لی۔

اس نے حکم دیا، کعبہ شریف پر چڑھانے کے لئے ایک بہت بڑا قیمتی غلاف بنایا جائے، کام شروع ہوا اور شاہی حکم کے مطابق ایک شاندار غلاف تیار ہوگیا، تُبَّع نے دھڑکتے دل کے ساتھ عقیدت میں ڈوب کر کعبہ معظمہ کو یہ غلاف پہنایا، تاریخ انسانی کا یہ پہلا غلاف تھا جو کعبہ کو پہنایا گیا۔

یہ سب کچھ کر کے بھی تُبَّع کی محبت کو قرار نہ آیا، اس نے چاہا کہ اور ذرائع سے بھی وہ اپنی عقیدت کا اظہار کرے۔ چنانچہ اس نے ’’مطابخ‘‘ یعنی باورچی خانے تعمیر کرنے کا حکم دیا، جب ’’شاہی مطابخ‘‘ تیار ہوگئے، تو اس نے اپنے کارندوں سے کہا ہر روز ایک سو اونٹ ذبح کر کے اہل مکہ کو کھلائے جائیں یہ لوگ مقدس گھر کے پڑوسی ہیں ان کی شاندار ضیافت کی جائے۔

تُبَّع بادشاہ جب تک وہاں رہا، اہل مکہ کی ضیافت کا یہ سلسلہ یونہی جاری رہا۔

آج کے جدید ذہن میں یہ سوال پیدا ہو سکتا ہے کہ ماضی قریب و بعید میں ایسے واقعات ظہور پذیر ہوئے ہیں جو بے حرمتی کے زمرے میں آتے ہیں مگر شواہد موجود ہیں کہ خلاف حرمت غلط حرکت کرنے والوں کی کوئی گرفت نہ ہوئی اور کسی کو ایسی سزا نہ ملی جو انہیں نشان عبرت بنا دیتی اور جس کی غیر معمولی اذیت رسانی کو دیکھ کر یہ رائے قائم کی جا سکتی کہ یہ بے حرمتی کا نتیجہ ہے۔

ایک صاحب دل نے اس کا ایک معنی خیز جواب دیا ہے اس کا ماحصل یہ ہے کہ کعبہ کے تقدس اور جاہ و جلال کو قائم رکھنے کے لئے بے حرمتی کرنے والوں کو فوراً سزا اس امت محمدیہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ظہور سے پہلے دی جاتی تھی کیونکہ اس کی حرمت کا پاسبان اور علانیہ دفاع کرنے والا کوئی نہ تھا۔ پس قدرت کا نادیدہ ہاتھ فوراً حرکت میں آتا اور بے حرمتی کے مرتکب کو آہنی گرفت میں لے لیتا تھا تاکہ دلوں پر اس کی ہیبت قائم رہے اور اس کی شوکت و عظمت کے سب قائل رہیں۔ اب یہ پاسبانی کا فریضہ امت کو سونپ دیا گیا ہے، اس کی ذمہ داری ہے کہ وہ پاسبانی کے فرائض انجام دے اور اس کی عظمت پر آنچ نہ آنے دے اور اگر کوئی بے حرمت کا ارتکاب کرے تو ایسی کڑی سزا دے کہ وہ عبرت کا نشان بن جائے اور اس ذمہ داری اور خدمت و نگرانی کے عوض خود اسے دنیا کی امامت عطا کی جائے اور اقتدار و جہاں بانی کے لئے منتخب کر لیا جائے، یہ اس امت کی توہین ہے کہ اس کے ہوتے ہوئے یہ فریضہ ابابیلوں کو سونپا جائے۔

مسلمان دیگر فرائض کی طرح اپنے اس فرض اور ذمہ داری سے بھی غافل ہوگئے ہیں اور اس کی پاسبانی کا فرض ادا نہیں کر رہے، نتیجہ یہ ہے کہ اس نے بھی ہماری پاسبانی سے منہ موڑ لیا ہے اور ہم ہر محاذ پر پٹ رہے ہیں۔ ابھرنے، پنپنے اور سرخرو ہونے کی ایک ہی راہ ہے کہ ہم از سر نو اس کے خدمت گار اور پاسبان بن جائیں۔ وہ ہمارا پاسبان بن جائے گا اور عہد کہن کی یاد تازہ اور شوکت رفتہ بحال ہو جائے گی۔

دنیا کے بتکدے میں پہلا وہ گھر خدا کا
ہم پاسباں ہیں اس کے وہ پاسباں ہمارا




^^ اوپر چليں ^^

^^ فہرست ^^

 << پچھلا صفحہ <<

>> اگلا صفحہ >>










© 1980 - 2022 Minhaj-ul-Quran International.


Warning: mysqli_close() expects parameter 1 to be mysqli, string given in /home/minhajki/public_html/minhaj.info/mag/index.php on line 133